06 ماہ سے زیادہ کویت سے باہر رکنے والوں کے لئے اہم خبر

وبائی بحران کی وجہ سے عائد سفری پابندیوں کی وجہ سے 6 ماہ کی خودکار منسوخی روک دی گئی، اب 06 ماہ سے زیادہ کویت سے باہر رکنا ممکن نہیں ہو گا۔

تفصیلات کے مطابق رہائشی امور کا جنرل محکمہ آرٹیکل 22 (انحصاری ویزا)، آرٹیکل 18 (جو نجی شعبے میں کام کرتا ہے) اور آرٹیکل 24 (نفس کفیل) کے حاملین کو چھ ماہ کی رعایتی مدت دے گا جو ستمبر میں ختم ہونے کا امکان ہے جبکہ دیگر چھ ماہ سے زیادہ ملک سے باہر رہنے والوں کے رہائشی اجازت نامے (اقامے) خود بخود منسوخ ہو جائیں گے۔ ذرائع نے بتایا کہ اس سلسلے میں وزارت داخلہ کی جانب سے جلد ہی ایک باضابطہ بیان جاری کیا جائے گا جس میں ڈیڈ لائن کے آغاز کے وقت کی وضاحت کی جائے گی جو ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ مناسب ہے کیونکہ یہ اتنا وقت دے گا جس سے تارکین وطن کی واپسی میں کوئی رکاوٹ نہیں ہوگی۔ یونیورسٹی کے طلباء اپنے اہل خانہ سے ملنے جائیں کیونکہ مطالعہ جون میں رک جاتا ہے اور ستمبر میں شروع ہوتا ہے۔

ذرائع نے کہا کہ ملک سے باہر رہنے والوں کے لئے آن لائن اقامہ کی تجدید ابھی بھی نافذ العمل ہے کیونکہ شہری یا رہائشی کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ ملک سے باہر رہتے ہوئے اپنی کفالت پر رہنے والوں کے رہائشی اجازت نامے (اقامے) کی تجدید کرے۔

یاد رہے کہ اس سے قبل یکم دسمبر 2021 کو وزارت داخلہ نے اعلان کیا تھا کہ کویت سے باہر 6 ماہ یا اس سے زیادہ رہائش کی مدت اختیار کرنے والے گھریلو ملازمین (20 نمبر ویزا رکھنے والے) کے اقاموں کی خودکار نظام کے ذریعے خود بخود منسوخی ہو جائے گی۔ وبائی بحران کی وجہ سے مختلف ممالک کے درمیان عائد سفری پابندیوں کی وجہ سے 6 ماہ کی خودکار منسوخی روک دی گئی تھی۔ انتظامیہ نے کہا تھا کہ کویتی شہری جو کویت سے باہر گھریلو ملازمین کو 6 ماہ سے زائد عرصے کے لیے رکھنا چاہتے ہیں وہ متعلقہ شخص کی درخواست کے لیے انتظامیہ کو 06 ماہ سے پہلے درخواست دے سکتے ہیں کہ وہ اپنے گھریلو ملازم کو کویت سے باہر رہنے کی اجازت دے سکے۔

بحوالہ: کویت اردو نیوز

اپنا تبصرہ بھیجیں