کویت کا ویزا ختم ہونے پر نیا ویزا ہی لینا ہو گا !

مختلف قومیتوں کے کل 316,700 تارکین وطن مختلف وجوہات کی بناء پر اپنے رہائشی اجازت ناموں کی تجدید کرنے میں ناکام رہے۔

تفصیلات کے مطابق مختلف قومیتوں کے کل 316,700 تارکین وطن مختلف وجوہات کی بناء پر اپنے رہائشی اجازت ناموں کی تجدید کرنے میں ناکام رہے۔ ایسے غیرملکی یا تو کویت سے باہر تھے یا کوویڈ 19 وبائی بیماری کے پھیلنے کے بعد سفری پابندیوں کی وجہ سے واپس نہ آ سکے یا پھر وہ لوگ جنہوں نے اپنے روزگار کی تکمیل کے لئے واپس اپنے اپنے ممالک جا کر آباد ہونے کا فیصلہ کیا اور رضاکارانہ طور پر ملک چھوڑ دیا اس کے علاوہ ان 316,700 غیرملکیوں میں ایسے افراد بھی شامل ہیں جنہیں گزشتہ روز 15 نومبر تک ملک بدر کیا گیا ہے۔ روزنامہ الانباء نے کہا کہ یہ تارکین وطن درج ذیل زمرے میں تھے آرٹیکل 18 (نجی شعبہ)، آرٹیکل 17 (سرکاری شعبہ)، آرٹیکل 22 (انحصاری ویزا) اور آرٹیکل 20 (گھریلو کارکن) اور آرٹیکل 24 (ایک ہی کفیل) اس کے علاوہ یکم جنوری 2021 سے 15 نومبر 2021 تک ملک سے ڈی پورٹ کیے جانے والے مختلف قومیتوں کے 316,700 ہزار افراد تھے۔ ذرائع نے بتایا کہ ان میں سے زیادہ تر ایک عرب اور ایک ایشیائی ملک کے باشندے شامل ہیں جو کہ دو دیگر ایشیائی ممالک بھی ہیں جو گھریلو ملازمین کی فراہمی کرتے ہیں۔ یہ دیگر قومیتوں کے 44,124 شہریوں کے علاوہ ہے جو اپنے رہائشی اجازت ناموں کی تجدید میں ناکام رہے۔ ذرائع نے تصدیق کی کہ رہائشی امور کا شعبہ نرم ہے اور اس نے مدت ختم ہونے کے بعد آن لائن رہائشی اجازت ناموں کی تجدید کی اجازت دی اور ان کے ورک پرمٹ کو بھی منسوخ نہیں کیا جو ملک سے باہر 6 ماہ کی اجازت کی حد کے بعد واپس نہیں آسکتے ہیں۔ ذرائع نے کہا کہ رہائشی اجازت ناموں کی ایک بڑی تعداد کی میعاد ختم ہو چکی ہے کیونکہ وہ اپنے پاسپورٹ کی درستگی کی تجدید میں ناکام رہے۔ ذریعہ نے ان تمام لوگوں پر زور دیا اور کہا کہ جن افراد کے رہائشی اجازت نامے کی میعاد ختم ہو چکی ہے اور وہ کویت واپس آنا چاہتے ہیں انہیں تمام طریقہ کار دوبارہ شروع کرنا ہوگا۔

ذرائع: کویت اردو نیوز

اپنا تبصرہ بھیجیں