کویت: 60 سالہ غیرملکیوں کے ورک پرمٹ کی تجدید سے متعلق اچھی خبر

افرادی قوت “فتویٰ اور قانون سازی” کے تعاون سے فائل کو حل کرنے کے قریب ہے جبکہ 60 سال سے زیادہ عمر کے تمام غیرملکیوں کے لیے روایتی ہیلتھ انشورنس لازم ہونے کا انکشاف کیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق توقع کی جارہی ہے کہ ثانوی سرٹیفکیٹ یا اس سے کم تعلیم یافتہ 60 سالہ غیرملکیوں کے ورک پرمٹ تجدید کا فیصلہ ایک نئے فارمیٹ میں جاری کیا جائے گا جو پرائیویٹ ہیلتھ انشورنس کے نفاذ کے ساتھ پرانی فیس کی بنیاد پر ہی ہونے کا امکان ہے۔ باخبر ذرائع نے روزنامہ الرای کو انکشاف کیا کہ آنے والے دور میں ہیلتھ انشورنس کو عام کرنے کا ایک سرکاری رجحان ہے۔” یہ انشورنس 60 سال سے زائد عمر کے تمام تارکین وطن کے لیے لازمی ہو گی چاہے ان کی اہلیت یا سرٹیفکیٹ کچھ بھی ہوں تاکہ سرکاری صحت کے شعبے پر ایسا کوئی بوجھ نہ پڑے جس سے کویتی شہریوں کو فراہم کی جانے والی خدمات متاثر ہوں۔”

ذرائع نے اطلاع دی ہے کہ تجارت اور صنعت کے وزیر ڈاکٹر عبداللہ السلمان نے فتویٰ اور قانون سازی کے سربراہ کونسلر صلاح المساد سے کہا کہ وہ پبلک اتھارٹی برائے افرادی قوت کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کے آئندہ اجلاس میں شرکت کرنے کے لیے “فتویٰ اور قانون سازی” کے قانونی مشیروں کی مدد لیں۔ ذرائع نے اشارہ کیا کہ السلمان نے کہا کہ اس سلسلے میں ان کی درخواست “فتویٰ اور قانون سازی” ڈیپارٹمنٹ کی رائے کے عنوان کو شامل کرنے کی وجہ سے سامنے آئی ہے جو 2020 کی قرارداد نمبر (520) میں موجود ہے۔ ثانوی سرٹیفکیٹ کے ساتھ 60 سال سے زیادہ عمر کے رہائشیوں کو ورک پرمٹ دینے کے لیے قواعد و ضوابط کی فہرست اور آئندہ “مین پاور” بورڈ آف ڈائریکٹرز کے ایجنڈے میں کیا شامل ہے۔ ذرائع نے توقع ظاہر کی کہ یہ فائل ڈائریکٹر جنرل احمد الموسیٰ کی جانب سے پہلے جاری کیے گئے 60 سالہ غیرملکیوں کے فیصلے کو منسوخ کرنے کے لیے بورڈ آف ڈائریکٹرز کی منظوری سے حل ہو جائے گی اور بورڈ آف ڈائریکٹرز نیا فیصلہ جاری کرے گا جس سے ورک پرمٹ کی تجدید کا امکان زیادہ ہے۔ تجویز کے مطابق مقامی انشورنس کمپنیوں میں سے ایک میں ہیلتھ انشورنس کے علاوہ روایتی فیس کے عوض اس طبقہ کے لیے اجازت ناموں کی اجازت دی جائے گی جسے وزیر السلمان نے مالی اور لاجسٹک دباؤ سے بچنے کے لیے آگے بڑھایا ہے جو اس گروپ کے افراد کی وجہ سے صحت کے نظام پر پڑ سکتے ہیں۔

ذرائع: کویت اردو نیوز

اپنا تبصرہ بھیجیں