کویت: ٹریول اور سیاحت کے شعبے نے سول ایوی ایشن سے مطالبہ کر دیا

سیاحت اور ٹریول سیکٹر نے آپریٹنگ صلاحیت پر بغیر پابندی کے پروازوں کا مطالبہ کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق سیاحت اور ٹریول سیکٹر کے عہدیداران آپریٹنگ صلاحیت پر پابندی کے بغیر پروازوں کا مطالبہ کررہے ہیں کیونکہ ان کے مطابق 2500 اضافی مسافر ٹکٹ کی قیمتوں میں اضافے کو نہیں روک سکتے۔ اگرچہ ٹریول سیکٹر نے کویت بین الاقوامی ہوائی اڈے پر روزانہ 10 ہزار مسافروں کی گنجائش بڑھانے کے فیصلے کا خیرمقدم کیا ہے تاہم ٹریول اینڈ ٹورازم سیکٹر کے عہدیداروں کے مطابق یہ قدم قریبی مدت میں ٹکٹوں کی بڑھتی قیمتوں کو کم کرنے کے لیے کافی نہیں ہوگا خاص طور پرمسافروں کا “کوٹہ” جو کچھ ممالک جیسے ہندوستان کے لیے مقرر کیا گیا ہے۔ توقع ہے کہ اسی طرح کا کوٹہ دوسرے ممالک جیسے مصر ، پاکستان ، نیپال ، سری لنکا اور بنگلہ دیش کے لیے بھی مقرر کیا جائے گا۔

عہدیداروں نے نشاندہی کی کہ ہوائی اڈوں کے فیصلوں کا مطالعہ کرنے کے لیے کام کرنے والی جماعتوں کی کثیر تعداد ایئرلائنز اور سیاحت اور سفری دفاتر کی سرگرمیوں کو اس کے سابقہ ​​دور میں واپس لانے میں نمایاں تاخیر کا باعث بنتی ہے جس سے مسافروں کے اخراجات میں اضافہ ہوتا ہے۔ حیرت ہے کہ ایئر پورٹ کیوں نہیں کھولا گیا جیسے خطے کے باقی خلیجی ممالک میں کھولا گیا تھا۔ آپریشنل صلاحیت کی وضاحت کیے بغیر خاص طور پر جب کویت میں صحت کی ضروریات انتہائی سخت ہیں تو مسافروں کی تعداد کی حد متعین کرنا ضروری نہیں تھا۔

فیڈریشن آف ٹورازم اینڈ ٹریول آفس کے ایک رکن عبدالرحمن الخرافی نے کہا کہ ہوائی اڈے کی گنجائش تقریبا 2500 مسافروں کو بڑھانے کا فیصلہ صرف ایئر لائنز کو ایک مخصوص نمبر تک محدود رکھنے کے مسائل کو جاری رکھنے کا باعث بنے گا جو مسافروں پر منفی اثر ڈالے گی۔

الخرافی نے بیان کیا کہ اگر ہوائی اڈے کی گنجائش کو برقرار رکھا جاتا ہے تو ٹکٹ کی قیمتیں مصر جیسے کچھ مقامات کے لئے تقریبا 2000 دینار تک پہنچ جائیں گی جہاں سے کچھ پروازوں پر واپسی ٹکٹ کی قیمت فی الحال 465 دینار تک پہنچ گئی ہیں جو ملک سے باہر پھنسے ہوئے لوگوں کے لیے کویت واپس آنے لئے ایک بڑا چیلنج ہے۔ الخرافی نے کہا کہ ہر ملک کے لیے کوٹہ مقرر کرنے سے آنے والے عرصے میں قیمتوں میں نمایاں اضافہ جاری رہے گا اس طرف اشارہ کرتے ہوئے کہ سول ایوی ایشن کی جنرل ایڈمنسٹریشن نے بھارت سے تقریبا 700 مسافروں کی نشاندہی کی ہے جن میں 70 سے 100 روزانہ ہر پرواز میں کویت آسکیں گے۔

انہوں نے توقع کی کہ مصر اور باقی ممالک سے آنے والے لوگوں کی اسی تعداد کا تعین کیا جائے گا جن میں سری لنکا ، نیپال ، بنگلہ دیش اور پاکستان سمیت براہ راست پرواز کی اجازت دی گئی ہے جس سے ان ممالک میں پھنسے ہوئے افراد کی واپسی میں تاخیر ہوگی اور اسپانسر پر قیمت کا بوجھ بڑھے گا کیونکہ ان ایشیائی ممالک سے آنے والوں کی اکثریت گھریلو ملازمین اور ڈرائیورز کی ہے۔

بدر نے مزید کہا کہ ہوائی اڈے پر کام کرنے والی کمپنیوں کے لیے نئی پروازوں کا ابھی تک تعین نہیں کیا گیا ہے جو ہر کمپنی کے لیے اجازت دی گئی تعداد کے مطابق قیمتوں کے تعین میں تاخیر کرتی ہے ریزرویشن میں تاخیر ہوتی ہے اور اس شعبے کے تمام کارکنوں پر منفی اثر پڑتا ہے

ذرائع: کویت اردو نیوز

اپنا تبصرہ بھیجیں