کویت: پروازیں بحال ہونے کے بعد اگلہ طریقہ کار کیا ہو گا؟

کویت سول ایوی ایشن ہوائی اڈے پر آپریٹنگ کوٹہ بڑھانے کی منتظر

کویت سول ایوی ایشن ابھی تک نئی منزلوں کے لیے “آپریٹنگ کوٹہ” تقسیم کرنے کے لیے ہوائی اڈے کی آپریٹنگ صلاحیت بڑھانے کے لیے کابینہ کی منظوری کی منتظر ہے۔

تفصیلات کے مطابق کویت سول ایوی ایشن کی جنرل ایڈمنسٹریشن نے آج بروز منگل کو پاکستان، بھارت، مصر ، بنگلہ دیش ، سری لنکا اور نیپال کے ساتھ دوبارہ پروازیں چلانے کے لیے ایک سرکلر جاری کیا ہے لیکن روزنامہ الانباء کے باخبر ذمہ دار ذرائع کے مطابق ابھی تک فی الحال کسی بھی ایئرلائن نے پرواز کرنے یا پروازوں اور مسافروں کی تعداد کے مطابق آپریٹ کرنے کی درخواست جمع نہیں کرائی ہے۔ ذرائع نے بتایا کہ “سول ایوی ایشن” سرکلر کے اجراء کے بعد کا طریقہ کار حسب ذیل ہوگا۔

  • ان ممالک میں کام کرنے والی ایئرلائنز بشمول قومی کمپنیاں (کویت – الجزیرہ) جنرل ڈائریکٹوریٹ آف سول ایوی ایشن کو آپریشن کی درخواست جمع کرانا شروع کردیتی ہیں۔
  • سول ایوی ایشن میں ایئر ٹرانسپورٹ کا محکمہ آپریٹنگ درخواستوں کا مطالعہ کرتا ہے۔ پروازوں کا تعین کرتا ہے اور فلائٹ شیڈول تیار کرتا ہے۔
  • پروازوں کی تاریخ پر سول ایوی ایشن سے ایئر لائنز کو سرکاری خط بھیجا جاتا ہے۔
  • ایئر لائنز فلائٹ بکنگ (ویب سائٹس ، سیل آؤٹ لیٹس ، یا سیاحت اور ٹریول ایجنٹس) شروع کر دیتی ہیں۔

ذرائع نے بتایا کہ “سول ایوی ایشن” ملک میں آنے والی پروازوں کے لیے کویت بین الاقوامی ہوائی اڈے کی آپریٹنگ صلاحیت بڑھانے کے بارے میں گزشتہ روز دی گئی درخواست پر کابینہ کے جواب کا انتظار کر رہی ہے۔ یہ نوٹ کرتے ہوئے کہ تمام توقعات موجودہ صلاحیت کو دوگنا کرنے کے لیے ہوائی اڈے کے آپریشن میں اضافے کی نشاندہی کرتی ہیں جو کہ اب تک تقریبا 7،500 مسافروں کے لیے مخصوص ہے۔

انہوں نے کہا کہ کویت کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر اس وقت 29 ایئرلائنز کام کر رہی ہیں اور موجودہ آپریٹنگ کوٹہ (7500 یومیہ مسافر) ان میں تقسیم کیا گیا ہے جبکہ ان منزلوں پر کام کرنے والی ایئر لائنز کو وہی کوٹہ تقسیم کرنا مشکل ہے جس کا 3 کمپنیوں کے لئے ہر منزل تک پہنچنے کی توقع ہے جس کی وجہ سے سول ایوی ایشن کی جانب سے یومیہ مسافروں کی گنجائش بڑھانے کی درخواست دی گئی ہے جس کا فیصلہ جلد اور مثبت آنے کی توقع کی جارہی ہے۔

ذرائع: کویت اردو نیوز

اپنا تبصرہ بھیجیں