کویت: سرکاری ملازمت کرنے والے 60 سالہ تارکین وطن کو چھوٹ دے دی گئی

60 سال کی عمر کو پہنچنے والے تارکین وطن کے لیے ورک پرمٹ کی تجدید نہ کرنے کے فیصلے میں سرکاری ملازمین شامل نہیں ہیں۔

تفصیلات کے مطابق نئے فیصلے کے مراحل میں جو پرائیویٹ سیکٹر کو مضبوط بنانے میں منفی رویے کو ظاہر کرتا ہے پرائیویٹ سیکٹر سیکنڈری ڈگری یا اس سے کم ڈگری رکھنے والے 60 سال کی عمر کو پہنچنے والے تارکین وطن کے لیے ورک پرمٹ کی تجدید نہ کرنے کے فیصلے کے حوالے سے بڑے بحران کا سامنا کر رہا ہے۔ ذمہ دار حکومتی ذرائع نے روزنامہ القبس کے ذرائع کو بتایا کہ اس فیصلے میں نجی شعبے کے کارکن بھی شامل ہیں تاہم اس فیصلے میں سرکاری شعبے کے ملازمین شامل نہیں ہیں۔ ذرائع نے بتایا کہ اس گروپ کے افراد کے بچوں کے لیے اقاموں کی تجدید نہ کرنے کا فیصلہ اور اس فیصلے کے بعد استثنا کا فیصلہ (جیسے سالانہ 2000 دینار کی فیس ادا کرنا وغیرہ) اگر جاری کیا گیا تو اس میں سرکاری شعبے کے وہ کارکن شامل نہیں ہوں گے جو 60 سال کی عمر کو پہنچ چکے ہیں یا اس سے تجاوز کر چکے ہیں۔

ذرائع نے مزید کہا کہ اس عمر کے سرکاری شعبے میں ملازمین کی تعداد مرکزی ادارہ شماریات کی طرف سے جاری لیبر مارکیٹ کے تازہ ترین اعدادوشمار کے مطابق 6000 مرد و خواتین ملازمین ہیں جن میں سے تقریبا 1800 افراد 65 سال سے زائد عمر کے ہیں جبکہ سرکاری شعبے میں ریٹائرمنٹ کی عمر 65 اور کچھ شعبوں میں 75 سال ہے۔

دوسری طرف یہ فیصلہ جو یکم جنوری سے نافذ ہوا تھا ملک میں رہنے والے 60 کی دہائی والے ہائی اسکول ڈپلومہ یا اس سے کم ڈگری کے حامل افراد نے مین پاور اتھارٹی کے لئے منفی رویہ اختیار کرلیا ہے کیونکہ اتھارٹی نے ایک سے زیادہ فیصلے میں ترمیم کے اعلانات کیے ہیں جس سے اس گروپ کے مسائل مزید بڑھ گئے ہیں۔ اگرچہ وزارت داخلہ کی طرف سے ایسا کوئی فیصلہ یا سرکلر جاری نہیں کیا گیا ہے جس میں ماں یا باپ کی بچوں پر منتقلی کو منع کیا گیا ہو اس کے باوجود عمر رسیدہ رہائشیوں کے اقاموں کو بغیر کوئی وجہ بتائے مسترد کر دیا جاتا ہے۔

رہائشیوں نے کہا کہ انہوں نے حال ہی میں ریذیڈنسی امور کی جنرل ایڈمنسٹریشن کو ایک “ماں” اور “باپ” کی منتقلی کے لیے رجوع کیا جن کے پاس دو کام کے اجازت نامے تھے لیکن ان کی درخواستیں بغیر کسی وجہ کے مسترد کردی گئیں اور ان پر جرمانے عائد کیے گئے۔

ذرائع : کویت اردو نیوز

اپنا تبصرہ بھیجیں