ماہر کویتی شہری نے کرونا وائرس کے علاج کا ایک نیا طریقہ دریافت کر لیا،

کویتی شہری ابراہیم المسعود نے کرونا وائرس کے علاج سے متعلق ایک نیا طریقہ دریافت کر کے دنیا کو حیران کر دیا۔

ابراہیم المسعود ایک نوجوان وائیرولوجسٹ ہیں۔ آپ برطانیہ کی یونیورسٹی آف لیڈس سے ڈاکٹریٹ ریسرچر کے طور پر منسلک ہیں۔

روزنامہ القبس کے مطابق یہ قدرتی طور پر ہوا کہ المسعود کے آخری سال کا مطالعہ کرونا وائرس کے وبائی مرض سے متعلق تھا، اور المسعود کو اٌن چند کویتوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے جو کرونا وائرس سے متعلق تحقیق پر کام کر رہے ہیں۔

ایک انٹرویو میں انہوں نے بتایا کہ وہ کرونا وائرس کے علاج سے متعلق
ایک ڈاکٹریٹ پروگرام میں اپنے سپروائزر کے ساتھ کام کر رہے ہیں۔ اس دوران ان کے مطالعہ میں وائرس کی نقل و حرکت پر غور کرنا اور وائرس کو انسانی جسم میں چھپنے سے روکنا شامل ہے تاکہ وائرس ہمارے مدافعتی نظام سے آمنے سامنے لڑ سکے۔

المسعود نے مزید بتایا کہ ان کے تجربات وائرس کے انسانی خلیوں سے نہ جڑنے کے لیے کیے جارہے ہیں۔ تاکہ وائرس چھپ نہ سکے اور کھل کر ہمارے مدافعتی نظام کے سامنے آسکے۔ اس طرح سے ہمارے مدافعتی نظام کو دوسرے وائرس کی طرح اس سے بھی لڑنے میں مدد ملے گی۔

بحوالہ : عرب ٹائمز

اپنا تبصرہ بھیجیں