پاکستان سے دوبئی جانے والوں کو 2 بار کرونا کا ٹیسٹ کروانا ہو گا

دُبئی کی حکومت نے دُنیاکےمختلف ممالک کے مسافرو ں کے لیے دو الگ الگ کیٹگریز کا اعلان کر دیا ہے۔ ایمریٹس ایئر لائنز کے مطابق پاکستان سے دوبئی جانے والوں کو 2 بار کورونا کا ٹیسٹ کروانا ہو گا۔ پہلی بار انہیں اپنے وطن کی رجسٹرڈ لیبارٹری سے ٹیسٹ کرواناہوگا جبکہ دوبئی پہنچنے کے بعد بھی ان کا ایک اور پی سی آر ٹیسٹ ہو گا۔پہلا ٹیسٹ وطن میں کروائیں گے جس کی نیگیٹو رپورٹ ملنے کے بعد 96 گھنٹوں کے اندر اندر دوبئی کا سفر کرنا لازمی ہو گاجبکہ ان کا دُوسرا پی سی آر ٹیسٹ دوبئی پہنچنے کے فوراً بعد لیا جائے گا۔ دو بار ٹیسٹ کی یہ پابندی سیاحتی اور وزٹ ویزہ ہولڈرزدونوں پر عائد ہوگی۔پاکستان سے دوبئی ایئرپورٹ پر رُکنے والے ٹرانزٹ مسافروں کے لیے بھی سفر سے قبل کورونا ٹیسٹ کی رپورٹ حاصل کرنے کے بعد 96 گھنٹوں کے اندر سفر کرنا لازمی ہو گا۔کورونا ٹیسٹ کے نیگیٹو سرٹیفکیٹ صرف پرنٹ کی صورت میں قابل قبول ہوں گے انگریزی یا عربی زبان میں رپورٹ لکھی ہو۔ واضح رہے کہ دوبئی سول ایوی ایشن اتھارٹی کی جانب سے پاکستان سے دوبئی کا سفر کرنے والے مسافروں کیلئے نئی سفری ہدایات جاری کی گئی ہیں۔

اب سے دوبئی جانے والے کسی بھی پاکستانی مسافر کی جانب سے 2 نجی لیبز چغتائی اور اسلام آباد ڈائیگناسٹک سینٹر سے کروائے گئے کرونا پی سی آر ٹیسٹ کی رپورٹ قبول نہیں کی جائے گی۔ دوبئی جانے والے ہر مسافر کو درج بالا پاکستانی لیبز کے علاوہ دیگر رجسٹرڈ لیبز سے پی سی آر ٹیسٹ کرونا ہوگا، اور دوبئی پہنچنے پر اس ٹیسٹ کی رپورٹ جمع کروانا ہوگی۔ کوئی بھی ایسا مسافر جس کے پاس قابل قبول کرونا ٹیسٹ رپورٹ نہ ہوئی، اسے دوبئی داخلے کی اجازت نہیں ملے گی۔ دوبئی حکام کے اس فیصلے کا اطلاق پیر 26 اکتوبر سے کر دیا گیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں