سول ایوی ایشن نے کالعدم ممالک پر پابندی ختم کرنے کی سفارش کر دی۔

سول ایوی ایشن نے کالعدم ممالک پر پابندی ختم کرنے کی سفارش کر دی۔

عربی کے مقامی اخبار الجریدہ کے مطابق اس قدم سے بیرون ملک پھنسے ہوئے رہائشیوں کی واپسی اور غیر مقامی شعبے میں تعطل کو روکنے میں اہم پیش رفت ہوگی، کویت بین الاقوامی ہوائی اڈہ کے امور کے ڈپٹی ڈائریکٹر جنرل ، آپریشن اور مانیٹرنگ کے ڈائریکٹر ٹی 4 ٹرمینل پرفارمنس کے بارے میں ، صالح الفداغی نے انکشاف کیا ہے کہ ایئرپورٹ پر کمرشل بحالی کے لئے ایگزیکٹو کمیٹی نے سپریم کورٹ کو ایک تجویز پیش کی تھی جس میں نا صرف ممنوعہ ممالک کے تارکین وطن کے داخلے کے لئے ایک طریقہ کار اپنانے کو کہا گیا تھا بلکہ کویت میں قرنطینہ کی مدت کو نافذ کرکے تجارتی پروازوں کو دوبارہ شروع کرنے کی تجویز بھی دی گٸی تھی۔
الفداغی نے گذشتہ روز الجریدہ کو بتایا کہ اس تجویز کے تحت کویت میں ان ممالک سے آنے والے افراد کے لئے 14 دن کے لئے ادارہ جاتی قرنطین اپنانے کی پابندی عائد کردی گئی ہے ، جو ایک انٹرمیڈیٹ “عبوری” ریاست میں رہنے کے بجائے صحت سے متعلق ضروری کنٹرول کے مطابق ہے جو پھنسے ہوئے تارکین وطن کو درپیش کچھ رکاوٹوں کو دور کرنے میں مدد کریں گے۔

جبکہ یہ تجویز متعدد مقامی مطالبات کے مترادف ہے، خصوصاً وزارت تعلیم ، انصاف اور صحت کی طرف سے بیرون ملک پھنسے ہوئے اساتذہ ، ججوں ، ڈاکٹروں اور نرسوں کی ایک بڑی تعداد کو واپس کرنے کے، الفداغی نے کہا کہ اس پر عمل درآمد کے لیے 3 اہم فریقوں کی کوششوں کی ضرورت ہے جو کہ شہری ہوا بازی کی عمومی انتظامیہ اور وزارت صحت و داخلہ ، خاص طور پر قرنطینہ انتظامیہ کو کوششوں کی ضرورت ہوگی۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ تجویز زیر غور ہے ، اور فی الحال ہر شخص اس پر عمل درآمد کرنے کی اپنی صلاحیتوں کا مطالعہ کررہا ہے ، اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ اس سلسلے میں مطالعات موجود ہیں ، اور جب بھی “سپریم کمیٹی” ان تمام سفارشات کو اٹھائے گی جب وہ اس پر عملدرآمد کے لئے تیار اداروں پر غور کرے گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں