وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی کی ،ماسکو میں جاری، ایس سی او کی کونسل برائے وزرائے خارجہ کے اجلاس کی سائیڈلائن پر چینی وزیر خارجہ وانگ ژی کے ساتھ ملاقات

دوران ملاقات دو طرفہ تعلقات، خطے کی صورتحال سمیت باہمی دلچسپی کے اہم علاقائی و عالمی امور پر تبادلہ خیال۔ واضح رہے کہ گذشتہ تین ہفتوں کے دوران یہ دونوں وزرائے خارجہ کے مابین ہونیوالی دوسری ملاقات ہے
ہم گذشتہ ماہ حائنان میں ہونیوالے پاک چین اسٹریٹیجک مذاکرات کے دوسرے دور کے نتیجے میں متفقہ طور پر طے کیے گئے اہداف کے حصول کے لیے پر عزم ہیں۔ پاکستان اور چین خطے میں قیام امن اور استحکام کے حوالے سے، بااعتماد اسٹریٹیجک شراکت دار ہیں اور اس شراکت داری میں روزافزوں اضافہ ہو رہا ہے۔ علاقائی روابط کا فروغ، امن و استحکام کا قیام اور عوامی روابط میں اضافہ “بی آر آئی” اور” ایس سی او “کے یکساں اہداف ہیں۔ پاکستان، ون چائنہ پالیسی، کا حامی ہے اور چین کی خود مختاری اور قومی مفاد سے متعلقہ امور پر چین کے شانہ بشانہ کھڑا ہے۔ پرامن افغانستان خطے میں امن و استحکام کیلئے ناگزیر ہے۔ مخدوم شاہ محمود قریشی
وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے مزید کہا کہ پاکستان، افغان قیادت میں، افغانوں کیلئے قابل قبول مفاہمتی مذاکرات کا حامی ہے۔ مقبوضہ جموں و کشمیر میں جاری انسانی حقوق کی مسلسل خلاف ورزیاں ہندوستان کے معتصبانہ رویے کی عکاسی کرتی ہیں۔ ہمیں قوی امید ہے کہ بی آر آئی اور سی
پیک جیسے منصوبے کرونا وبا کے بعد ہماری اقتصادی بحالی کیلئے ممدومعاون ثابت ہوں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں